بلاول بھٹو لاکھ کوشش کر لیں، این آر او نہیں ملے گا، وزیر اطلاعات شبلی فراز


Mian Fayyaz Ahmed Posted on July 30, 2020

اسلام آباد: وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات شبلی فراز نے کہا ہے کہ اپوزیشن حکومت پر پریشر ڈال رہی ہے لیکن عمران خان کسی صورت کمپرومائز نہیں کریں گے۔ بلاول بھٹو لاکھ کوشش کر لیں، این آر او نہیں ملے گا۔اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ فیٹف قانون سازی پاکستان کے لیے ہے لیکن اپوزیشن اسے نیب ایکٹ سے منسلک کر دیتی ہے۔ ان کی ترامیم کو پڑھیں گے تو ہنسی ضرور آئے گی۔ ان کا بنیادی مقصد این آر او ہے۔ یہ کرپشن کو اپنی نظر سے قانون بنانا چاہتے ہیں۔ اپوزیشن کی ترامیم ردی کی ٹوکری میں ڈالی جائیں گی۔

شبلی فراز نے کہا کہ بلاول بھٹو شیشے کے گھر میں رہ کر دوسروں کے گھروں میں پتھر پھینک رہے ہیں۔ انہوں نے وزیراعظم عمران خان کو تنقید کا نشانہ بنایا۔ وہ یا تو لاعلم ہیں یا سب کچھ جانتے ہوئے جھوٹ بولتے ہیں۔وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ وزیراعظم اور ان کی فیملی نے محنت سے اثاثے بنائے۔ ان کے پاس وہ اثاثے نہیں جو بلاول بھٹو کے پاس ہیں۔ عمران خان نے کرکٹ کی تمام کمائی کا ریکارڈ عدالت کو دیا۔

انہوں نے کہا کہ پاناما کیس کے بعد عمران خان پر سیاسی کیس بنایا گیا تھا، تاہم عدالت نے انھیں صادق اور امین قرار دیا جبکہ بلاول کی فیملی پر صداقت اور امانت کے بڑے سوالیہ نشان ہیں۔انہوں نے چئیرمین پیپلز پارٹی پرتنقید کرتے ہوئے کہا کہ بلاول بھٹو کے پاس کرپشن پر سوال کرنے کا اخلاقی جواز نہیں ہے۔ وہ بتائیں کہ سرے محل کیسے خریدا گیا؟ سوئس اکاؤنٹ کا کیا ہوا؟ اومنی گروپ کیلئے منی لانڈرنگ کس نے کی؟ بلاول بھٹو کو ان سوالوں کا جواب اپنی فیملی سے مل جائے گا۔ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ دوہری شہریت اور معاونین پر قانون میں قدغن نہیں ہے۔ تحریک انصاف نے کوئی غیر قانونی کام نہیں کیا۔ مشیروں کے استعفوں بارے ابھی کچھ کہنا قبل ازوقت ہوگا۔ اگر کسی وزیر کو تبدیل یا ہٹایا جاتا ہے تو وجہ پرفارمنس یا کسی بہتر کھلاڑی کو لانا بھی ہو سکتا ہے۔ ٹیم کو تبدیل کرنا وزیراعظم کا اختیار ہے۔

اپوزیشن پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کہتے ہیں نواز شریف اور زرداری کھاتا ہے نہیں لگاتا بھی ہے لیکن عمران خان کہتا ہے نہ کھاؤں گا نہ کھانے دونگا۔ وزیراعظم اپنی پارٹی سمیت کسی کو بھی نہیں چھوڑیں گے۔ وقت بدل گیا ہے، بلاول نئے دور کی حقیقت کو سمجھیں، وہ نہیں سمجھیں گے تو ان کا مستقبل تاریک نظر آ رہا ہے۔